Home / Pakistan Air Force / بھارت فضائی مہارت میں پاکستان کا مقابلہ نہیں کرسکتا، بھارتی ائر چیف کا اعتراف

بھارت فضائی مہارت میں پاکستان کا مقابلہ نہیں کرسکتا، بھارتی ائر چیف کا اعتراف

بھارتی ائر چیف بریندرسنگھ نے اپنی فضائیہ کی نااہلی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا ہے کہ فضائی مہارت میں پاکستان کا مقابلہ نہیں کرسکتے۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی فضائیہ کے چیف نے مودی سرکارکے جنگی طاقت ہونے کے دعوے کا پول کھول دیا ہے، میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بھارتی ائیرچیف بریندرسنگھ نے اعتراف کیا کہ بھارتی فضائیہ مہارت میں پاکستان کا مقابلہ نہیں کرسکتی۔ بھارتی ائیرچیف کا کہنا تھا کہ 200 طیارے بھی حاصل کرلیں تب بھی پاکستان اور چین کی فضائی مہارت سے پیچھے ہیں۔

بریندرسنگھ نے کہا کہ بھارت کو اس وقت سب سے زیادہ خطرات لاحق ہیں، ہمارے پڑوسی ملک ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر بیٹھے ہوئے نہیں ہیں، حالیہ برسوں میں چین نے تبت کے علاقے میں فوجی طاقت بڑھائی ہے۔ان کا کہنا ہے کہ ہمارے مخالفین کے خیالات راتوں رات بدل سکتے ہیں۔ اس لئے ہمیں بھی اپنے مخالفین جتنی طاقت جٹانی ہوگی۔

یاد رہے رواں سال جون میں بھی بھارتی آرمی چیف نے مقبوضہ کشمیر میں ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ جتنے نوجوان مارتے ہیں، ان سے زیادہ تحریکِ آزادی میں شامل ہو جاتے ہیں۔ خیال رہے گذشتہ سال جولائی میں بھارت کے نائب آرمی چیف سراتھ چند نے پاکستان کی بہتر دفاعی صلاحیت کا اعتراف کرتے ہوئے برملا کہا تھا کہ پاکستانی دفاعی صنعت سے بھارت کا کوئی مقابلہ نہیں۔

بھارتی نائب آرمی چیف کا کہنا تھا پاکستان کی دفاعی صنعت بھارت سے کہیں زیادہ بہتر ہے پاکستان دنیا بھر میں اپنے دفاعی شعبے کی اشیا برآمد کر رہا ہے، بھارتی آرڈینینس فیکڑیاں بدلتی دنیا کے معیار کے مطابق نہیں ہیں۔

اس سے قبل بھارتی حکام کی ایک رپورٹ نے بھارتی فوج کا بھانڈا پھوڑ دیا تھا، جس میں کہا گیا تھا کہ کسی جنگ کی صورت میں بھارت 10 دن بھی نہیں لڑ سکتا۔ ایک اندازے کے مطابق بھارت کے پاس موجود آدھے سے زیادہ اسلحہ زنگ آلود ہو چکا ہے۔

اس وقت بھارت کی تینوں افواج لاپروا آفیسرز سے بھری پڑی ہیں، یہی وجہ ہے کہ تینوں افواج کے آئے روز سکینڈلز بھی سامنے آتے رہتے ہیں، بھارتی افواج کی تنظیم نو پر توجہ نہیں دی گئی جس کی وجہ سے فوج کی کارکردگی انتہائی ناقص ہو چکی ہے اور اب بھارت تقریبا ڈیڑھ لاکھ فوجی فوری طور پر گھر بھیجنے پر مجبور ہو چکا ہے۔

یاد رہے بھارتی فضائیہ کو تقریبا 42 سکواڈرنز کی ضرورت ہے، جب کہ اس وقت بھارت کے پاس موجود طیارے یہ تعداد پوری نہیں کرتے۔ جبکہ پرانے لڑاکا طیاروں کو ریٹائر کرکے ان کی جگہ نے نئے طیارے فضائیہ میں شامل کرنے میں بھی بھارتی فضائیہ نے بہت سستی کی، اور بالاآخر بھارتی فضائیہ کو مگ 21 اور مگ 27 لڑاکا طیاروں کا ایک پورا سکواڈرن ریٹائر کرنا پڑا، کیونکہ یہ طیارے اب اڑنے کے قابل نہیں رہے، یہی وجہ ہے کہ انہیں اڑتے تابوت بھی کہا جاتا ہے۔

بھارتی فضائیہ کے چیف نے یہ بھی کہا ہے کہ پاکستان نے بڑی تعداد میں جدید جے ایف سترہ اور ایف سولہ طیارے فضائیہ میں شامل کر لیے ہیں۔ بظاہر بڑی نظر آنے والی فضائیہ کو پاکستان کے بنائے ہوئے جے ایف سترہ لڑاکا طیارے پاک فضائیہ میں شامل ہونے سے بھارتی فضائیہ کو کون کون سے خطرات لاحق ہیں۔ بھارتی فضائیہ کے چیف خوب جانتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ بھارتی فضائیہ کی پریشانی میں آئے روز اضافہ ہو رہا ہے۔

Share This

About yasir

Check Also

پاک فضا ئیہ کی ترکی کو زبردست پیشکش

پاکستان کی ترک فضائیہ کوایوی ایشن اور فوجی تربیت میں مدد اور تعاون کی پیش …