Home / International / اسرائیل کو شام میں ابھی اور ’سرپرائز‘ ملیں گے، دمشق کی تنبیہ

اسرائیل کو شام میں ابھی اور ’سرپرائز‘ ملیں گے، دمشق کی تنبیہ

اسرائیل کو شام میں ابھی اور ’سرپرائز‘ ملیں گے، دمشق کی تنبیہ
دمشق حکومت نے تنبیہ کی ہے کہ اگر اسرائیل نے شام پر دوبارہ حملہ کرنے کی کوشش کی، تو اسے ’مزید سرپرائز‘ ملیں گے۔ جنگ زدہ ملک شام نے حال ہی میں اپنے ریاستی علاقے میں حملہ کرنے والا ایک اسرائیلی جنگی طیارہ مار گرایا تھا۔

شام میں دمشق اور اسرائیل میں یروشلم سے منگل تیرہ فروری کو ملنے والی نیوز ایجنسی روئٹرز کی رپورٹوں کے مطابق دمشق حکومت نے عشروں سے حریف چلے آ رہے اپنے ہمسایہ ملک اسرائیل کو تنبیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ شامی ریاستی علاقے میں دوبارہ کسی بھی طرح کی عسکری کارروائی کرنے سے باز رہے۔ لیکن اگر اسرائیل نے پھر بھی ایسا کچھ کیا تو مستقبل میں اسے ماضی قریب کے مقابلے میں ’اور بھی زیادہ حیران کن حالات‘ کا سامنا کرنا پڑے گا۔

روئٹرز کے مطابق اسرائیل کو اس شامی تنبیہ کا پس منظر یہ ہے کہ شامی فضائی دفاع نظام نے ہفتہ دس فروری کو شمالی اسرائیل میں ایک ایسے ایف سولہ جنگی طیارے کو مار گرایا تھا، جو شام میں ایک حملہ کرنے کے بعد واپس لوٹ رہا تھا۔
اس اسرائیلی جنگی طیارے کے مار گرائے جانے کی خود اسرائیل نے بھی تصدیق کر دی تھی اور کہا تھا کہ یہ ایف سولہ جنگی ہوائی جہاز سرحد پار شام میں ایک ہدف کو نشانہ بنانے کے بعد واپس لوٹ رہا تھا۔ ساتھ ہی اسرائیل کی طرف سے یہ بھی کہا گیا تھا کہ اس ایف سولہ طیارے سے جس ہدف کو نشانہ بنایا گیا تھا، وہاں سے ایرانی ساخت کے ڈرون طیاروں کو فضا میں بھیجا جاتا تھا۔ شام کی کئی سالہ خانہ جنگی میں ایران صدر بشار الاسد اور ان کی حکومت کا حامی ہے۔

دوسری طرف یہ بات بھی اہم ہے کہ شام اور اسرائیل کے مابین یہ براہ راست ناخوشگوار عسکری واقعہ گزشتہ 36 برسوں کے دوران دونوں ہمسایہ ممالک کے مابین نظر آنے والی شدید ترین کشیدگی کی وجہ بھی بنا۔
اس تناظر میں شامی نائب وزیر خارجہ ایمن سوسن نے منگل کو دمشق میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا، ’’آپ کو یقین ہونا چاہیے کہ جارحیت کرنے والے حیران رہ جائیں گے۔ اس لیے کہ انہوں نے سوچا تھا کہ کئی سالہ جنگ کی وجہ سے شام ایسے حملوں کا جواب دینے کے قابل نہیں رہا۔ لیکن ایسا نہیں ہے۔ انہوں (اسرائیل) نے جب بھی شام پر دوبارہ حملہ کرنے کی کوشش کی، انہیں اور بھی زیادہ سرپرائز ملیں گے۔‘‘

جو اسرائیلی ایف سولہ طیارہ مار گرایا گیا تھا، وہ لبنان کے ساتھ 1982ء کی جنگ کے بعد سے ایسا پہلا موقع تھا کہ کسی ’دشمن ملک‘ کی طرف سے کارروائی کے نتیجے میں کوئی اسرائیلی جنگی طیارہ تباہ ہوا ہو۔ اس طیارے میں سوار دونوں پائلٹ بچ گئے تھے مگر وہ کافی زخمی ہو گئے تھے۔

Share This

About yasir

Check Also

نریندر مودی’ ٹرمپ اور مسلمان

ایک طرف امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکہ میں مسلمانوں کی آمد کو بند اور …