Home / Pakistan Army / پاکستان آرمی سپیشل سروسز گروپ کے ہتھیار اور خدمات

پاکستان آرمی سپیشل سروسز گروپ کے ہتھیار اور خدمات

پاکستان آرمی سپیشل سروسز گروپ کے ہتھیار اور خدمات”__

آرمی کے سپیشل سروسز گروپ کی تشکیل ایوب خاں کے دور سے شروع ہوئی اور آج اس گروپ میں 14 ہزار کے لگ بگ کمانڈوز موجود ہیں ”__

1965 کی جنگ میں اس گروپ کے کمانڈوز نے بھارتی پنجاب میں موجود اہم بھارتی ائیربیس کو بھی تباہ کیا۔

1987 میں اس گروپ نے سیاچن کی 4 برف پوش چوٹیوں پر انڈیا کا کیا گیا قبضہ چھڑوایا اور وہاں موجود تمام بھارتی فوجی مارے گئے۔
اس کے علاوہ دہشت گردوں کے کئی حساس مقامات پر کئے گئے کئی حملے ناکام بنا ڈالے۔

سب سے اہم واقعہ اے پی ایس پر دہشت گردوں کے حملے کے دوران پیش آیا۔
اس وقت ایس ایس جی کی الضرار کمپنی نےانتہائی تربیت یافتہ دہشت گردوں کو ٹھکانے لگایا۔

یاد رہے الضرار کمپنی کو ایس ایس جی کی سب سے بہترین کمپنی مانا جاتا ہے۔
ایس ایس جی کو نیوٹرل ماہرین دنیا کی چھٹی طاقتور ترین کمانڈؤ فورس گردانتے ہیں۔
جبکہ اس حوالے سے انڈیا کا نام ٹاپ ٹین میں بھی کہی نظر نہیں آتا۔
پاک ایس ایس جی وزیرستان میں دہشت گردوں کے خلاف لاتعداد کامیاب اپریشن کر چکی ہے۔
pakistan SSG Top On

مثال کے طور پر وادیِ شوال کو دنیا کی خطرناک ترین وادیوں میں شمار کیا جاتا ہے۔
ضربِ عضب سے پہلے یہاں ٹی ٹی پی کے گوریلا جنگ کے ماہر کمانڈوز تعینات تھے جن کو شکست دینا ناممکن لگ رہا تھا لیکن پاک ایس ایس جی نے ان کا کامیابی سے صفایا کر دیا۔

پاک ایس ایس جی کے پاس بہترین ہتھیار موجود ہیں۔
ایس ایس جی کی سروس رائفل M-4 ہے جبکہ دوسرے نمبر پر AUG Styer اور FN-2000 استعمال ہوتی ہے۔

بعض آپریشنز میں جدید T-56 رائفل بھی استعمال ہوتی ہے۔
ایس ایس جی کے زیراستعمال سنائپر رائفلز دہشت گردوں کے لیے دہشت کی علامت سمجھی جاتی ہیں۔

ان رائفلز میں M-82 barret,رینج ماسٹر،ڈرگونیو وغیرہ نام کی سنائپر رائفلز شامل ہیں۔

یہ پاک آرمی کے اشارے پر ہر اس جگہ آپریشن کرتے ہیں جہاں ایک عام فوجی کا پہنچنا نا ممکن ہوتا ہے۔

اس لیے اس گروپ کی تربیت بھی انتہائی سخت ہوتی ہے۔

یہ فورس صرف ایک فوجی اہلکار ہی جوائن کر سکتا ہے۔
اس میں بھرتی کے لیے پہلے پاک آرمی میں بھرتی ہونا ضروری ہوتا ہے۔

Share This

About yasir

Check Also

کیا واقعی جنرل ضیاء الحق امریکی آلہ کار تھے؟

پاکستان میں آج بھی ایسے لوگوں کی کمی نہیں جو جنرل ضیاء الحق کو امریکی …