Home / International / ایرانی وزیرِ خارجہ کی پاکستان آمد

ایرانی وزیرِ خارجہ کی پاکستان آمد

ایرانی وزیرِ خارجہ کی پاکستان آمد
مشرقِ وسطی کی کشیدہ صورتِ حال کے پیشِ نظر ایرانی وزیرِ خارجہ جواد ظریف کے دورہِ پاکستان کو سیاسی مبصرین بہت دلچسپی کے ساتھ دیکھ رہے ہیں۔

ایرانی وزیرِ خارجہ پاکستان کے دورے پر اسلام آباد پہنچے جہاں انہوں نے وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی سے ملاقات بھی کی۔ اس کے علاوہ ایرانی وزیرخارجہ نے پاک ایران بزنس فورم کی ایک تقریب سے بھی خطاب کیا۔

یہ دورہ ایک ایسے موقع پر ہوا ہے جب امامِ کعبہ ڈاکڑ صالح بن محمد بھی پاکستان میں موجود ہیں اور انہوں نے بھی اسلام آباد میں صدر مملکت ممنون حسین، وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی اور اسپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق سے ملاقاتیں کیں۔

جواد ظریف سے ملاقات کے دوران وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی نے دونوں ممالک کے درمیان تجارت کو فروغ دینے پر زور دیا اور اس بات کا اعادہ بھی کیا کہ ایران پاکستان پائپ لائن کو عملی جامہ پہنانے میں جو مسائل درپیش ہیں، اسلام آباد ان کے حل کے لیے کام کرے گا۔

سیاسی مبصرین اس دورے کو انتہائی اہم قرار دے رہے ہیں۔ کچھ کے خیال میں اس دورے کا مقصد ان ایرانی تحفظات پر بات چیت کرنا ہے، جو پاکستان کی طرف سے سعودی عرب فوج بھیجنے کے فیصلے کی وجہ سے پیدا ہوئے ہیں لیکن کچھ تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ خطے کی صورتِ حال اس دورے کا محور ہے۔

اسلام آباد سے تعلق رکھنے والے تجزیہ نگار ایوب ملک کے خیال میں پاکستان کی طرف سے سعودی عرب فوج بھیجے جانے پر تہران پریشان ہے۔ ایوب ملک کے مطابق، ’’مسئلہ یہ ہے کہ ہم پراکسی بنے ہوئے ہیں اور اپنے قومی مفادات کا نہیں سوچتے۔ اسی کی دہائی میں ہم نے امریکا کے لیے لڑائی لڑی اور اب ہم نے، اس حقیقت کے باوجود کے ہماری پارلیمنٹ نے یہ قرارداد پیش کی تھی کہ سعودی عرب فوج نہ بھیجی جائے لیکن پھر بھی ہم نے فوج بھیج دی ہے، جس سے ایران کو شکایت ہے۔ ہمیں اس شکایت کو سننا چاہیے اوراپنی فوجوں کو کہیں بھی استعمال نہیں کرنا چاہیے۔

لیکن ہمارا مسئلہ ہے کہ سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات ہمیں ہمارے مزدور نکالنے کی دھمکی دیتے ہیں اور ہم فوراﹰ ڈر جاتے ہیں۔ اس ڈر کی وجہ سے امریکا نے ہمیں دبایا۔ آئی ایم ایف اور عالمی مالیاتی اداروں نے دبایا اور اب سعودی عرب دبا رہا ہے ۔ ہمیں اپنے ملکی مفادات کو دیکھنا چاہیے اور سعودیہ ہو یا ایران ہمیں کسی کی آپس کی لڑائی کا حصہ نہیں بننا چاہیے۔‘‘

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا، ’’ہمیں ایران سے تعلقات بہتر رکھنا چاہیں۔ وہ اپنے حصے کی پائپ لائن پر کام کر چکا ہے۔ ہمیں بغیر کسی دباؤ کے آئی پی کی تکمیل کرنی چاہیے۔ اس سے نہ صرف پاکستان بلکہ خطے میں بھی امن و استحکام آئے گا۔‘‘

لیکن دفاعی تجزیہ نگار جنرل ریٹائرڈ امجد شعیب کے خیال میں پاکستان اور ایران ایک دوسرے کے مفادات سے آگاہ ہیں۔’’میرے خیال میں ایرانی وزیرِ خارجہ عسکری اور سیاسی قیادت دونوں سے ملیں گے اور انہیں اس یقین دہانی پر بھروسہ ہے، جو آرمی چیف نے تہران کو کچھ مہینوں پہلے کرائی تھی کہ پاکستان کی فوج ایران کے خلاف استعمال نہیں ہوگی۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا، ’’میرے خیال میں اس دورے کا مقصد افغانستان میں داعش کے بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ، خطے میں امریکی موجودگی اور ایران پاکستان پائپ لائن سے متعلق ہے۔ شام و عراق سے بھاگ کر بڑے پیمانے پر داعش کے کارندے افغانستان آ گئے ہیں، جس میں ایک بڑی تعداد روسی شہریوں کی بھی ہے۔ داعش کی موجودگی نہ صرف ایران بلکہ پاکستان اور روس کے لیے بھی خطرناک ہے۔ اسی لیے ایران پاکستان کے ساتھ مل کر اس خطرے سے نمٹنا چاہتا ہے۔‘‘

امجد شعیب کا یہ بھی کہنا تھا کہ خطے میں امریکا کی موجودگی ایران سمیت خطے کے سارے ممالک کے لیے پریشان کن ہے۔ ’’ایران اور خطے کے دوسرے ممالک کو معلوم ہے کہ امریکا داعش کا بہانہ بنا کر یہاں طویل قیام کی راہ ہموار کرنا چاہتا ہے۔ اسی لیے پاکستان اور ایران مشترکہ طور پر داعش کو ختم کرنا چاہتے ہیں، جس میں ان کو خطے کے دوسرے ممالک کی بھی حمایت ہوگی۔ جب داعش ختم ہوجائے گی تو امریکا کا یہاں رکنے کا جواز باقی نہیں رہے گا۔‘‘

Share This

About yasir

Check Also

نریندر مودی’ ٹرمپ اور مسلمان

ایک طرف امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکہ میں مسلمانوں کی آمد کو بند اور …