Home / International / روسی انجینیرز سائنسی مقاصد کیلئے استعمال ہونے والے سپر کمپیوٹر کا نجی استعمال کرتے رہے

روسی انجینیرز سائنسی مقاصد کیلئے استعمال ہونے والے سپر کمپیوٹر کا نجی استعمال کرتے رہے

ماسکو (نیوز ڈیسک) روس کے آل رشین ریسرچ انسٹیٹیوٹ آف ایکسپیریمنٹل فزکس، جو کہ روسی فیڈریشن نیوکلیئر سنٹر کا وہ مرکز ہے جس کے سائنسدانوں نے سوویت یونین کا ایٹم بم بنایا، کے انجینئر سائنسی مقاصد کے لئے استعمال ہونے والے سپر کمپیوٹر کے ذریعے کرپٹو کرنسی کا غیر قانونی دھندا کرتے ہوئے رنگے ہاتھوں پکڑے گئے ہیں۔

انٹرفیکس نیوز ایجنسی کے مطابق انسٹیٹیوٹ کی پریس سروس کے سربراہ زالسکایا تاتیانا کا کہنا ہے کہ سائنسی تحقیق کے لئے استعمال ہونے والے سپر کمپیوٹر کو ذاتی مقاصد کے لئے استعمال کرتے ہوئے کرپٹو کرنسی کی مائننگ کی جا رہی تھی۔ زالسکایا کی جانب سے یہ نہیں بتایا کہ اس جرم کا انکشاف ہونے پر کتنے افراد کو گرفتار کیا گیا ہے اور روس کی فیڈرل سکیورٹی سروس نے بھی اس بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا ہے، تاہم اطلاعات ہیں کہ متعدد افراد کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔

یہ اہم سائنسی مرکز روسی دارالحکومت کے مشرق میں واقع ہے جہاں 1946ءسے ایٹمی تحقیق جاری ہے۔ مضبوط ترین سکیورٹی حصار میں واقع اس تحقیقاتی مرکز کو اس قدر خفیہ رکھا گیا ہے کہ روس کے پر بھی اس کا کوئی ذکر نہیں ملتا ہے۔ اس مرکز کے سپر کمپیوٹروں کی حساس نوعیت کی وجہ سے انہیں انٹرنیٹ سے بھی منسلک نہیں کیا گیا ہے مگر کچھ عرصہ قبل جب اس تحقیقاتی مرکز کے ایک سپر کمپیوٹر کی جانب سے انٹرنیٹ سے منسلک ہوں ے کا انکشاف سامنے آیا تو تحقیقات کا آغاز کیا گیا۔ پتہ چلا کہ سپر کمپیوٹر کو انٹرنیٹ سے منسلک کرنے کا بنیادی مقصد کرپٹو کرنسی کی مائننگ کرنا تھا۔

تحقیقات کے دوران یہ انکشاف بھی سامنے آیا کہ متعدد دیگر بڑی کمپنیوں کے سپر کمپیوٹنگ وسائل کو بھی کرپٹو کرنسی کے لین دین کے لئے استعمال کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ روسی حکام کا کہنا ہے کہ یہ خطرناک مجرمانہ سرگرمیاں ہیں اور ان کا کوئی فائدہ بھی نہیں ہے کیونکہ متعلقہ ادارے اس نوعیت کی ہر کوشش کو ناکام بنانے کی مکمل صلاحیت رکھتے ہیں۔
russian latest

Share This

About yasir

Check Also

نریندر مودی’ ٹرمپ اور مسلمان

ایک طرف امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکہ میں مسلمانوں کی آمد کو بند اور …