Home / Pakistan Air Force / ائیر چیف سہیل امان ائیر ڈیفنس کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹر کا دورہ

ائیر چیف سہیل امان ائیر ڈیفنس کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹر کا دورہ

پاکستان ائیر چیف سہیل امان نے 4 جنوری کو ائیر ڈیفنس کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹر کا دورہ کیا، یہ دورہ بہت اہم مقصد کے لیے کیا گیا تھا، ائیر چیف نے کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر میں آپریشنز کا معائنہ کیا اور پاک فضائیہ کے کومبیٹ کریو سے ملاقات کی، ائیر چیف نے کومبیٹ کریو کی پیشہ وارانہ مہارتوں اور جزبے کو سراہا۔

اصل میں ایئرچیف کا یہ دورہ عام دنوں میں کیے جانے والے دوروں سے مختلف تھا، گزشتہ کچھ دنوں سے امریکہ پاکستان کو دھمکیاں دے رہا ہے، اور امریکی صدر یہاں تک کہہ چکا ہے کہ ہم جہاں چاہیں جب چاہیں پاکستان پر ڈرون حملے کر دیں گے، یہ دھمکی پاکستان کے شہری علاقوں کو ٹارگٹ کرنے کے لیے دی گئی تھی ناکہ پاک افغان بارڈر پر۔

پاکستان کی مسلح افواج کو امریکی صدر کی نیت کا اندازہ ہو چکا تھا لہذا اس دن سے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے بھی کچھ ایسے بیانات سننے کو ملے جن میں انہوں نے کہا کہ دشمن ملک جتنا بھی طاقتور کیوں نہ ہو اگر ہم پر جنگ مسلط کی گئی تو اس دشمن ملک کی عوام اس کا براہ راست مزہ چکھے گی، انہوں نے یہ بھی کہا کہ اب پاکستان کا کوئی بال بھی بیکا نہیں کرسکتا۔ جناب یہ الفاظ آرمی چیف کے ہیں اور بہت اہمیت رکھتے ہیں یہ الفاظ کسی سیاست دان کے نہیں جو کہ صرف فرضی ہوں۔

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے تینوں مسلح افواج کو ہر دم تیار رہنے کی ہدایت کی ہے، اسی سلسلے میں پاکستان نیوی کی طرف سے بھی میزائل ٹیسٹ کی صورت میں پیغام دیا گیا، اور دوسرے دن ائیر چیف نے ایئر ڈیفنس کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹر کا دورہ کیا۔
Pakistan Navy

یہ بات ممکن ہے کہ رات کے وقت امریکی فضائیہ اسٹیلتھ طیاروں کا استعمال کرکے پاکستان کے اہم علاقوں پر اٹیک کرے، یہ اسٹیلتھ طیارے افغانستان میں بگرام ایئر بیس پر اس وقت بھی تیار کھڑے ہیں، یہ طیارے اس وقت بھی تیار تھے جب ایبٹ آباد میں امریکی آپریشن ہوا تھا، امریکہ کو خدشہ تھا کہ پاکستانی فضائیہ ان کے آڑے آئے گی اور اگر پاکستانی فضائیہ نے کارروائی روکی تو فوراً “F-22” لڑاکا طیارے افغانستان سے پاکستان بھیجے جائیں گے۔
america plan to attack on Pakistan

اس واقعے کے بعد پاکستان کی فضائیہ نے اہم اقدامات کیے اور اپنے ایئر ڈیفنس سسٹم کو مزید بہتر کیا گیا، اس وقت پاکستان کا ایئر ڈیفنس جدید ریڈاروں اور لانگ رینج اینٹی ایئرکرافٹ میزائلوں پر مشتمل ہے، جن کی تفصیلات کو خفیہ رکھا گیا ہے تاکہ دشمن کو ان کی افادیت معلوم نہ ہوسکے۔

About yasir

Check Also

وہ وقت جب پاکستانی فضائیہ کے میراج طیاروں کو امریکی نہیں پکڑ سکے

پاکستان ائیر فورس کے جنگجو ہوابازوں کو ہدف دیا گیا کہ انہیں بغیر کوئی سراغ …