Home / News / دنیا کا خطرناک ترین ہتھیارایٹم بم کیسے بنا؟

دنیا کا خطرناک ترین ہتھیارایٹم بم کیسے بنا؟

دنیا میں اس وقت 21ہزار 8سو 44 ایٹم بم ہیں‘ ان ایٹم بمز میں قیامت بھری ہوئی ہے. سائنس دانوں کا خیال ہے اگر یہ بم پھٹ جائیں تو گیارہ منٹس میں پوری دنیا ختم ہو جائے گی اور سائبیریا سے لے کر الاسکا اور جاپان سے لے کر نیوزی لینڈ تک دنیا میں کوئی انسان بچے گا اور نہ ہی کوئی پرندہ‘ جانور اور پودا اور یہ کرہ ارض آگ کا ایک ایسا گولہ بن جائے گا جیسا یہ کروڑوں سال پہلے اس وقت تک جب یہ سورج سے ٹوٹ کر الگ ہوا تھا۔
گویا ایٹم بم اس دنیا انتہائی مہلک اور خوفناک ایجاد ہے لیکن آپ شائد یہ جان کر حیران رہ جائیں کہ یہ مہلک ایجاد غلط فہمی پر مبنی ایک خط کا ردعمل تھی۔
یہ خط 1939ءمیں آئین سٹائن نے امریکا کے صدر فرینکلن روز ویلٹ کو لکھا تھا اور اس خط نے آگے چل کر ایٹم بم جیسی تباہی کی بنیاد رکھ دی. آئین سٹائن جرمنی کا یہودی تھا‘ یہ 17اکتوبر 1933میں جرمنی سے بھاگ کر امریکا آ گیا‘ اسے 1938ءمیں کسی نے یہ غلط اطلاع دے دی کہ ہٹلر کے سائنس دانوں نے ایٹم کو توڑ لیا ہے جس کی وجہ سے یہ ایک انتہائی طاقتور بم بنا رہے ہیں.یہ بم امریکا اور یورپ کو تباہ کر دے گا‘ آئین سٹائن گھبرا گیا اور اس نے امریکی صدر کو یہ خط لکھا کہ جناب جرمن سائنس دان ایٹم کو توڑنے میں کامیاب ہو گئے ہیں جس کے بعد دنیا کا طاقتور ترین بم بنانا ممکن ہو چکا ہے.

میری آپ سے درخواست ہے آپ اپنے تمام سائنس دانوں کو ایٹم کی تیاری پر لگا دیں‘ آپ زیادہ سے زیادہ یورینیم بھی جمع کریں تا کہ آپ جرمنوں سے پہلے پہلے یہ ٹیکنالوجی حاصل کر لیں. امریکی صدر کو آئین سٹائن کا خط ملا تو اس نے اس خط کو بہت سیرئس لیا کیونکہ آئین سٹائن اس وقت تک دنیا کا سب سے بڑا سائنسدان سٹیبلش ہو چکا تھا اور کسی کیلئے اس کی معلومات کے بارے میں شک تک ممکن نہیں تھا.صدر روز ویلٹ نے فوراً مین ہٹن پراجیکٹ لانچ کر دیا۔ یوں ایٹمی ہتھیار وجود میں آئے۔

Share This

About yasir

Check Also

جدہ میں امریکی قونصل خانے کے قریب حملہ کرنے والا پاکستانی نہیں بھارتی تھا

حکومت کے اہلکاروں نے کہا ہے کہ 2016 میں سعودی عرب کے جدہ میں امریکی …