Home / Pakistan / الیکشن کے وقت دیے گئے پاک آرمی چیف کے بیان کو متنازع طریقے سے پیش کیا گیا۔

الیکشن کے وقت دیے گئے پاک آرمی چیف کے بیان کو متنازع طریقے سے پیش کیا گیا۔

ہم پاکستان دشمن قوتوں کو ووٹ کے ذریعے شکست دینگے : جنرل باجوہ

یہ بیان جنرل باجوہ نے انتخاب والے دن ووٹ ڈالتے ہوئے دیا عین اس وقت جب بلوچستان سمیت کئی جگہوں پر پاکستان دشمن پولنگ سٹیشنوں پر دہشت گردانہ حملے کر رہے تھے۔

باجوہ صاحب کا بیان درپیشں حالات اور موقع کی مناسبت نہایت مناسب تھا۔ لیکن اس کے الگے دن جب انتخابات کے نتائج آنے شروع ہوئے جس کے بعد اسی بیان کو لے کر مشہور زمانہ گستاخ رسول وقاص گورایا ملعون نے تنقید کی اور اس کے بعد ان کے ہم خیال لبرلز نے اس بیان کی تاویلیں کرنی شروع کیں۔

ملحدین اور لبرلز کے نظریاتی پیروکار فضل الرحمن نے حسب معمول عین کی ان ہی کی لائنز پر  وہی کچھ اپنی تقریر میں دہرایا ہے جو چند دن پہلے ملحدین دہرا چکے ہیں اور پاک فوج پر خوب تنقید کی اور سوال کیا کہ ” واضح کیا جائے کہ کون دشمن ہے”

اس کا مطلب ہوتا ہے چور کی داڑھی میں تنکا۔

ان منافق ملاؤوں کی حالت یہ ہے کہ آپ ان کے سامنے دعا کر لیں کہ اللہ پاکستان کے دشمنوں کو برباد کرے تو اس پر بھی انہیں غصہ آجاتا ہے۔

ووٹ کی طاقت سے دشمن شکست اس لیے کھا رہا ہے کہ اس کے ذریعے پاکستانیوں کی اکثریت اپنی مرضی کی حکومت لانے میں کامیاب رہتی ہے جس کے بعد بغاوت اور شورشیں کرنے کا جواز ختم ہوجاتا ہے جس کی ایک مثال علی وزیر اور محسن داؤر کی کامیابی ہے جو انتخابی عمل میں حصہ لیتے ہی پی ٹی ایم سے الگ ہوگئے۔

باجوہ صاحب کا پورا بیان یہ رہا.

“ہم نے قو می سطح پر دہشت گردی کو شکست دینے کیلئے بے پناہ قربانیاں دی ہیں اور ملک دشمن قوتوں کیخلاف متحد ہیں۔ عوام کے پاس اپنی تقدیر بدلنے کیلئے ووٹ ایک بہترین ذریعہ ہے ۔ دشمن قوتوں کو ووٹ کے ذر یعے شکست دیں گے۔ ہم پاکستان کیخلاف کام کرنیوالی دشمن قوتوں کا نشانہ ہیں، ملک دشمن قوتوں کو ناکام بنانے کیلئے طویل سفر طے کیا۔ لیکن ہم دشمن قوتوں کو شکست دینے کیلئے متحد اور مضبوط کھڑ ے ہیں، آج ہم دشمن قوتوں کو ووٹ کے ذریعے شکست دیں گے۔ لوگ گھروں سے باہر نکلیں اور بلا خوف ووٹ ڈالیں۔”

آپ دیکھ سکتے ہیں کہ بیان کے پہلے ہی حصے سے واضح ہے کہ اس سے مراد دہشت گرد ہیں۔ کوئی یہ پورا بیان مولانا کو سنا دے اور اس سے درخواست کرے کہ خدا کے لیے ملحدین کی پیروی کرنا چھوڑ دیں۔

تحریر: شاہد خان

Facebook Comments
Share This

About yasir

Check Also

جنگ ستمبر لاہور محاذ کے آخری مناظر کچھ اپنوں اور کچھ غیروں کی زبانی

بین الاقوامی شہرت یافتہ امریکی ہفت روزہ ٹائمز کے نمائندے لوئس کرار نے 23 ستمبر …

error: Content is protected !!