Home / Pakistan Army / پاکستان کی فوج پر دشمن کے برستے تیر

پاکستان کی فوج پر دشمن کے برستے تیر

مشترکہ مقصد ” پاکستان کو دہشت گرد ریاست ثابت کرنا اور پاک فوج کو بدنام کرنا “

مشترکہ کوششیں

امریکہ

کوئٹہ شوری کا شوشہ۔
” دہشت گردی پاکستان کی خارجہ پالیسی کا حصہ ہے ” امریکی قومی سلامتی کے مشیر کا بیان۔

امریکی کانگریس میں پاکستان کو ‘دہشت گردوں کی کفیل ریاست’ قرار دینے کا بل پیش۔ ریمنڈ ڈیوس کی پاکستان کے خلاف کتاب اور اسکی تیز رفتار نشر و اشاعت۔
ڈونلڈ ٹرمپ نے نئی سیکیورٹی پالیسی میں پاکستان دہشت گردوں کا مدد گار قرار۔
آزادی کشمیر کے لیے آواز اٹھانے والا حافظ سعید دہشت گرد قرار۔

انڈیا

بمبئی حملون کا ڈرامہ پاکستان پر الزام
سمجھوتہ ایکسپریس ڈرامہ پاکستان پر الزام
اڑی اٹیک کا ٹوپی ڈرامہ پاکستان پر الزام
انڈین وزیراعظم، مشیر برائے قومی سلامتی اور وزیرخارجہ کی مسلسل پاکستان کو دہشت گرد ریاست قرار دینے کی گردانیں۔

افغانستان

افغان حکومت افغانستان میں ہونے والی ہر کاروائی کی ذمہ داری پاکستان پر ڈالتی ہے اور دنیا بھر میں مقیم افغانی اس میں حصہ لیتے ہیں۔

پاکستانی سیاست دان

“ممبئی حملوں کے لیے لوگ پاکستان سے گئے” ۔۔۔ 2009ء میں نواز شریف کا انٹرویو
ڈان لیکس ون میں پاکستان دہشت گرد ریاست قرار۔ نواز شریف
ڈان لیکس ٹو میں پاکستان بمبئی حملوں کا ذمہ دار قرار ۔۔۔ نواز شریف

” ہمیں اپنا گھر صاف کرنے کی ضرورت ہے، حافظ سعید پاکستان سے باہر دہشت گردی کرتا رہا ہے” ۔۔۔ خواجہ آصف کا امریکہ میں بیان , مریم نواز کے پاک فوج پر الزمات۔

میمو سکینڈل میں آئی ایس آئی کو دہشت گردوں کی مددگار کہا گیا ۔ آصف زرداری اور حسین حقانی
” امریکہ پاکستان کی دہشت گردوں کی پشت پناہی مزید برداشت نہیں کرے گا ” ۔۔ پیپلز پارٹی کے حسین حقانی

سابق جنرل اسد درانی کی کتاب میں پاک فوج پر الزامات اور کتاب کی مفت فوری تقسیم ۔۔۔ اسد درانی ن لیگ اور نواز شریف کے بہت قریب ہیں۔

پاکستان دہشت گرد ریاست ہے اور پاک فوج دہشت گرد فوج ہے ۔ ایم کیو ایم کے الطاف حسین

“حساس ادارہ افغانستان میں مداخلت بند کرے، افغان بارڈر پر باڑ لگانے کا فائدہ نہیں” ۔۔۔ محمود اچکزئی

” پاک فوج گڈ طالبان کی سپورٹ بند کرے ” مولانا شیرانی

صحافی اور نام نہاد انسانی حقوق کے علمبردار عاصمہ جہانگیر مردودہ سے لے کر وقاص گورایا اور بشری گوہر سے لے کر جبران ناصر تک تمام سیکولر لبرلز، ملحدین اور گستاخان رسول کی تمام تر “انسانیت” کا نچوڑ یہی ہے کہ پاکستان کو دہشت گرد ریاست قرار دیا جائے اور پاک فوج کو کسی بھی طرح سے بدنام کیا جائے اور یہ کام وہ بلا تھکان کررہے ہیں۔

یہی کام صحافت سے وابستہ ایک بہت بڑا طبقہ بھی کر رہا ہے جن میں حامد میر، طلعت حسین، محیب الرحمن شامی جیسے ناموں کے علاوہ بائیں بازو کے تمام صحافی شامل ہیں۔

ان میں جنگ گروپ اور ڈان نیوز جیسے بڑے نشریاتی ادارے بھی شامل ہیں۔ ان میں انسانی حقوق کے نام نہاد علمبرداروں کی قوم پرستانہ تحریکیں بھی شامل ہیں جن میں منظور پشتین کی تحریک سرفہرست ہے جس کا نعرہ ہی ” دہشت گردی کے پیچھے وردی ہے” ہے۔

یہ سب کے سب ملکر اس ریاست اور فوج کو دہشت گرد ثابت کرنا چاہتے ہیں جس نے دہشت گردوں کے خلاف جنگ کرتے ہوئے سب سے زیادہ جانیں دی ہیں۔ جس نے دہشت گردوں کے خلاف اپنی ہی سرزمین پر سب سے بڑی اور طویل جنگ لڑی ہے اور اس جنگ میں فتح حاصل کی ہے۔ جن کے پاس زندہ ثبوت موجود ہیں کہ ان کے ملک میں دوسرے ممالک دہشت گردی کر رہے ہیں۔

جتنے بڑے پیمانے پر پاکستان اور افواج پاکستان کے خلاف کام ہو رہا ہے اس کے پیش نظر پاکستان کا اب تک بچے رہنا اور پاکستانی عوام کی بدستور اپنی افواج سے محبت ناقابل یقین ہے۔

یہ بھی شائد ان بہت سے معجزوں میں سے ایک ہے جو اس مملکت خداد سے وابستہ ہیں۔
اللہ پاکستان کا حامی و ناصر ہو۔

Facebook Comments
Share This

About yasir

Check Also

یوم تکبیر:اللہ کی عنایت و فضل کا دن

پاکستانی ایک پُرعزم قوم ہے وہ اپنے وجود کو قائم رکھنے اور آگے بڑھنے میں …

error: Content is protected !!