Home / News / پاکستان آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوا کا دورہ ایران

پاکستان آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوا کا دورہ ایران

پاکستان کے سپاہ سالار ایران کے اہم ترین دورے پر ہیں, ایران نے پاکستانی سپاہ سالار کا پرتپاک استقبال کیا ہے اور انہیں گارڈ آف آنر پیش کیا, پاکستان اور امریکہ کے خراب ہوتے تعلقات کے پیش نظر اس دورے کو بہت زیادہ اہمیت دی جا رہی ہے, دونوں ممالک ایک دوسرے کی شکایات کا بھی ازالہ کرینگے۔

ایران کو شکایت ہے کہ پاکستانی سرحد سے ان کے فوجیوں پر مسلسل حملے ہو رہے ہیں جن میں انکی ہلاکتیں بھی ہورہی ہیں۔
تاہم پاکستان کے پاس شکایات کی زیادہ لمبی فہرست ہے جن میں ۔
کلبھوشن کی مبینہ سہولت کاری, عزیر بلوچ کا بیان جس کے مطابق ایرانی اینٹلی جنس نے ان سے پاک فوج کے ٹھکانوں اور تنصیبات کے نقشے مانگے تھے, چاہ بہار میں انڈیا کی سرمایہ کاری اور براستہ ایران انڈیا کی افغانستان میں مداخلت

ملاقات میں ایرانی صدر روحانی نے پاک فوج کی دہشت گردوں کے خلاف کامیابی کو دنیا کے لیے مثال قرار دیا۔ جبکہ ایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ آئی بھی پاکستانی سپاہ سالار سے ملاقات کے متمنی ہیں۔ شائد یہ ملاقات آج کسی وقت ہو۔

صدر روحانی نے ایک بار پھر پاکستان کو تیل اور گیس کی پیشکش کی ہے, یعنی پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبے کا ایک بار پھر زندہ کیا جا سکتا ہے۔ اس منصوبے پر جنرل پرویز مشرف نے کام شروع کیا تھا۔ جسکا مقصد ایرانی گیس کو براستہ پاکستان انڈیا لے کر جانا تھا۔
Pak Iran Deal

پاکستان کو اسکا دہرا فائدہ تھا۔ ایک طرف گیس پائپ لائن کی راہدری کی شکل میں بھاری رقم ملتی تو دوسری طرف انڈیا کی ایک اہم سٹریٹیجک کمزوری ہمارے ہاتھ آجاتی, انڈیا ہمارا پانی بند کرے گا تو ہم انکی گیس بند کر دینگے!

آج سعودی عرب کو پاکستان کی زیادہ ضرورت ہے۔ ایران سے عالمی پابندیاں بھی ہٹ چکی ہیں۔ پاکستان کے پاس سنہری موقع ہے کہ دوبارہ اس منصوبے پر کام شروع کرے۔
ایران بڑی آسانی سے یہ گیس خریدنے کے لیے انڈیا کو دوبارہ قائل کرسکتا ہے۔

انڈیا کا افغانستان جانے کا اکلوتا راستہ ایران سے گزرتا ہے۔ اگر انڈیا اس معاملے میں پس و پیش سے کام لیتا ہے تو ایران اسکا افغانستان جانے کا راستہ بند کر سکتا ہے جس کے بعد انڈیا کی افغانستان میں تمام سرمایہ کاری اور محنت یکلخت ڈوب جائیگی۔
اس کے ساتھ ساتھ پاکستان ایران کی اس گیس کو چین بھی لے جا سکتا ہے جو توانائی کا بہت بڑا خریدار ہے۔

صرف اس ایک پائپ لائن سے دنیا کی تین بڑی قوتیں پاکستان پر انحصار کرینگی۔ ایسی راہداریوں کا فائدہ کیسے اٹھایا جاتا ہے اسکی ایک مثال پیوٹن ہے جس نے گاز پروم کمپنی کی یورپ جانے والی محض ایک پائپ لائن سے پوری روسی معیشت اور روس کے سٹریٹیجک مفادات کو تحفظ دیا۔

امید ہےکہ پاکستانی سپاہ سالار اس معاملے میں بھی ایران سے بات کریں گے۔

Facebook Comments
Share This

About yasir

Check Also

جدہ میں امریکی قونصل خانے کے قریب حملہ کرنے والا پاکستانی نہیں بھارتی تھا

حکومت کے اہلکاروں نے کہا ہے کہ 2016 میں سعودی عرب کے جدہ میں امریکی …

error: Content is protected !!